Ek lafz Mohabbat ka masoom fasana – Ghazal by Okasha Momin

جگر مرادآبادی کی مشہور غزل “ایک لفظ محبت کا ادنیٰ یہ فسانہ ہے” کی زمین پر عکاشہ فیاض مومن کی غزل “اک لفظ محبت کا معصوم فسانہ ہے”۔

 

اک لفظ محبت کا معصوم فسانہ ہے

معصوم سے دو دل ہیں ظالم یہ زمانہ ہے

 

اب خط و کتابت کا انداز پرانا ہے

نَو طرزِ محبت اب اس دور میں لانا ہے

 

گر جاتے ہو تم تو پھر یہ بات سمجھ لینا

اک روز تمہیں واپس گھر لوٹ کے آنا ہے

 

شاید اسی وجہ سے رہتے ہو خفا ہم سے

معلوم ہے، تم کو تو ہم نے ہی منانا ہے

 

منزل بھی نہیں پائی، رستہ بھی نہیں بدلا

اس راہِ محبت کا بس اتنا فسانہ ہے

 

دل کی تو یہ فطرت ہے روتا ہے رلاتا ہے

یادیں تری، اس کا اک چھوٹا سا بہانہ ہے

 

بس تم ہو آئینہ ہے، آئینہ سوچتا ہے

منظر کبھی نہ بدلے، منظر یہ سہانا ہے

 

چہرے پہ تیری زلفیں بکھری ہیں اس طرح سے

جیسے کہ بادلوں کو اک چاند چھپانا ہے

 

دنیا کبھی نہ دیکھے آنکھوں کے موتیوں کو

بارش کی رم جھموں میں اب آنسو بہانا ہے

 

اے عنکبوتؔ بس کر لفظوں کی سحر کاری

دنیا کو ہے خبر تُو اردو کا دِوانہ ہے

 

(عکاشہ مومن)

Ek lafz Mohabbat ka masoom fasana hai
Masoom se do dil haiñ, zalim ye zamana hai

Ab khat-o-kitaabat ka andaaz purana hai
Nao* tarze Mohabbat ab is daor me laana hai
(*nao=new)

Gar jaate ho tum to phir ye baat samajh lena
Ek roz tumheñ waapas ghar laot ke aana hai

Shayad isi waja se rahte ho khafa hamse
Malum hai, tumko to hamne hi manana hai

Manzil bhi nahi paayi, rasta bhi nahi badla
Is raah-e-mohabbat ka bas itna fasana hai

Dil ki to ye fitrat hai rota hai rulata hai
Yaadeñ teri iska ek chhota sa bahana hai

Bas tum ho aayina hai, aayina sochta hai
Manzar kabhi na badle, manzar ye suhana hai

Chahre pe teri zulfeñ, bikhri haiñ is tara se
Jaise ke baadaloñ ko ek chaand chhupana hai

Dunya kabhi na dekhe aankhoñ ke motiyoñ ko
Barish ki rim jhimoñ me ab ansu bahana hai

Aye ‘ankabut’ bas kar lafzoñ ki sahar kaari
Dunya ko hai khabar tu Urdu ka diwana hai

 

(Okasha Momin)

 

عکاشہ فیاض مومن شہر بھیونڈی (مہاراشٹر) کے رہنے والے ہیں۔ فی الحال ممبئ یونیورسٹی کے زیر نگرانی جاری ادارے انجمن اسلام-کالسیکر ٹیکنیکل کیمپس میں  میکانیکل انجینئرنگ  کے آخری سال کےطالبِ علم ہیں۔ Robotics اور  Programming Languagesمیں حد درجہ دلچسپی ہے۔ اردو زبان سے کافی رغبت ہونے کی وجہ سے اردو ادب کے مطالعے کا بھی ہمیشہ سے شوق رہا ہے ۔ نثری  مطالعے میں ناول اور افسانوں سے خاص لگاؤ ہے۔ جن میں ابنِ صفی اور ہاشم ندیم پسندیدہ ناول نگاروں میں سے ہیں۔ اس کے علاوہ اردو ادب کی صنفِ شاعری میں غالبؔ  کے اشعار نے ان کے شوق  کو مزید بڑھا دیا اور اشعار کی با معنی وسعتوں سے متاثر ہو کر انھوں نے بھی اس صنف میں عنکبوتؔ  تخلص کے ذریعےاپنے ادبی سفر کی شروعات کی۔ ان کی شاعری کا موضوع اکثر و بیشتر  محبت ہی رہا ہے۔

 

For more English and Urdu poetry available on The Beam Magazine, CLICK HERE.

Digiprove sealCopyright protected by Digiprove © 2019

3
Leave a Reply

avatar
3 Comment threads
0 Thread replies
1 Followers
 
Most reacted comment
Hottest comment thread
3 Comment authors
HiraIsha MominNaina Momin Recent comment authors

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

  Subscribe  
newest oldest most voted
Notify of
Naina Momin
Member
Naina Momin

MashaAllah bahot Khoob

Isha Momin
Member
Isha Momin

masha allah good😊

Hira
Guest
Hira

Wah behad a6a likha h👌👌👌
Zberdast a❤❤❤❤❤❤❤