Raqeeb Salaamat Rahe – Nazm by Hashim Nadeem

The Beam Magazine is happy to reproduce the nazm ‘Raqeeb Salaamat Rahe‘ by Hashim Nadeem. We are thankful to him for allowing us to publish his nazm on The Beam Magazine.

پھر یوں ہوا، ہم جدا ہوگئے
نہ زمین پھٹی، نہ فلک پارہ ہوا
اس شام بھی روشن ہر ستارہ ہوا

نہ نبض ہی تھمی، نہ سانس رکے
حیف ہے ہم پر، کہ زندہ رہے

گویا عشق نہ تھا، کوئی منافقت تھی
کچھ جسم کے تقاضے، اور کچھ تجارت تھی

تمہیں لفظ، مجھے جلووں کی دھوپ تھی درکار
کوئی ایک ضرورت مند تھا، دوسرا ساہوکار

پھر حسب معمول نشانیاں لوٹانے کی رسم ہوئی
تم نے میری نظمیں اور خط پلو سے کھولے
میں تمہاری پائل اور ٹوٹے کنگن کا حصہ جوڑ لایا

ساتھ مرنے جینے  کی قسمیں پلٹائی گئیں
اور تم آنسو پونچھ کر رقیب کی ڈولی چڑھ گئیں

تمہارے حصے محل آئے، میرے حصے شہرت
مگر ”عشق ڈاکے“ کی بدنامی رقیب نے سمیٹی

تب سے میں ہر شام، ہجر کی سونی درگاہ پر
اپنے رقیب کے نام کا دیا جلانے آتا ہوں

کہ یہ نادان زمانہ بھلا کیا جانے ….
ایسے بدنام رقیبوں کے دم سے ہی آج
جانے کتنے ”عاشقوں“ کا بھرم قائم ہے.

(ہاشم ندیم)

Phir yun huwa, hum juda ho gaye

Na zameen phati, na falak parah huwa

Us shaam bhi roshan har sitarah huwa.

 

Na nabz hi thami, na saans ruke

Haif hai hum par, ke zinda rahe.

 

Goya ishq na tha, koi munafiqat thi

Kuch jism ke taqaaze, aur kuch tijaarat thi.

 

Tumhein lafz, mujhe jalwon ki dhoop thi darkaar

Koi ek zaroorat mand tha, doosra sahukaar.

 

Phir hasb e maamool nishaniyan lautane ki rasm hui

Tum ne meri nazmein aur khat pallu se khole

Main tumhari payal aur toote kangan ka hissa jod laya.

 

Saath marne jeene ki qasmein paltayi gayi

Aur tum aansoo poch kar raqeeb ki doli charh gayi.

 

Tumhare hisse mahal aaye, mere hisse shohrat

Magar “ishq daakey” ki badnami raqeeb ne sameti.

 

Tab se main har shaam, hijr ki sooni dargah par

Apne raqeeb ke naam ka diya jalaane aata hoon.

 

Ke yeh nadaan zamana bhala kya jaane …

Aise badnaam raqeebon ke dum se hi aaj

Jaane kitne “aashiqon” ka bharam qaim hai.

 

(Hashim Nadeem)

 

ہاشم ندیم صاحب پاکستان اردو فکشن کا ایک بہت بڑا نام جنہوں نے اپنے کام کے زریعے پوری دنیا میں اردو پڑھنے اور سمجھنے والوں کے دلوں میں اپنی جگہ بنائی ہے ۔۔۔ چاہے عبداللہ جیسے شاہکار کی بات ہو یا خدا اور محبت جیسی دل کو چھو لینے والی تحریر کی بات ہو، ایک محبت اور سہی، صلیبِ عشق، بچپن کا دسمبر ۔۔ انہوں نے ایک کے بعد ایک لاجواب کہانی سے ہمارے دلوں پہ حکمرانی کی ہے ۔۔۔ انکے لکھے کردار آپکو محبت سے متعارف کرواتے ہیں ۔۔۔ جو اس بات کا منہ بولتا ثبوت ہے کہ ہاشم ندیم جو بھی لکھتے ہیں ۔۔۔ دل سے لکھتے ہیں ۔۔ ایسے ہی لوگوں کے لیے کہا گیا ہے

دل سے جو بات نکلتی ہے اثر رکھتی ہے”

“پر نہیں طاقتِ پرواز مگر رکھتی ہے

بیم میگزین کی پوری ٹیم ہاشم ندیم صاحب کی دل سے مشکور ہے ۔جنہوں نے اپنے اخلاق سے ثابت کردیا ہے کہ وہ ایک بڑے لکھاری ہی نہیں ہیں بلکہ ایک بڑے انسان بھی ہیں۔

The Beam Magazine Team

For more Urdu nazms and ghazals like ‘Raqeeb Salaamat Rahe’ available on The Beam Magazine, CLICK HERE.

Digiprove sealCopyright protected by Digiprove © 2019

Leave a Reply

avatar

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

  Subscribe  
Notify of