Kisi Gham Mai Musalsal Qaid Tha – Ghazal by Shabbir EhraAm

The Beam Magazine presents ‘Kisi Gham Mai Musalsal Qaid Tha‘ – a ghazal by Shabbir EhraAm.

بے کرانی تھی، پسِ بابِ مقفّل قید تھا
عشق میں، یا پھر کسی غم میں مسلسل قید تھا

وہ حریمِ دل سے باہر تھا مگر اس کا خیال
دل کے اندر ہی کسی خانے میں بےکل قید تھا

آخرش اس کو بھی اب سولی پہ لٹکایا گیا
زندگی بھر جو پسِ دیوارِ مقتل قید تھا

مثلِ برکش زندگی جیتا تھا رہا دُرِّ یتیم
وہ رہائی کے دنوں میں بھی مکمل قید تھا

ایک پل، بس ایک پل دیکھا تھا اس مہتاب کو
آنکھ کے پردے میں بس وہ ایک ہی پل قید تھا

(شبیر احرام)

Be kiraani thi, pas-e-baab-e-maqaffal qaid tha
Ishq mai, ya phir kisi gham mai musalsal qaid tha.

Woh hareem-e-dil se bahir tha magar uska khayal
Dil ke andar hi kisi khane mai be kul qaid tha.

Akhrish usko bhi ab sooli pe latkaya gaya
Zindagi bhar jo pas-e-deewar-e-maqtal qaid tha.

Masal-e-barkash zindagi jeeta raha durr-e-yateem
Woh rihaai ke dinon mai bhi mukammal qaid tha.

Aik pal, bas aik pal dekha tha us mehtab ko
Aankh ke parde mai bas wo aik hi pal qaid tha.

(Shabir EhraAm)

تعارف : شبیر احرام
شبیر احرام کراچی کی ادبی فضا میں بحیثیت شاعر 2012 سے نوجوان نسل کی نمائندگی کر رہے ہیں۔
آپ کا تعلق کراچی سے ہے۔ تعلیم ایم بی اے جب کہ پیشے سے استاد ہیں۔
نظم اور غزل کے شاعر ہیں۔ اردو اور انگریزی زبان میں شاعری کرتے ہیں۔ آپ کی شاعری اردو زبان سے محبت اور غم دوراں کی بھر پور عکاسی کرتی نظر آتی ہے۔ آپ زندگی اور انسانی جذبوں کے شاعر ہیں۔ آپ کی زیرِ طبع تصنیفات میں “دھواں ” اور “درویش” سرِ فہرست ہیں۔

 

For more English and Urdu poetry available on The Beam Magazine, CLICK HERE.

Digiprove sealCopyright protected by Digiprove © 2019

Leave a Reply

avatar

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

  Subscribe  
Notify of