Ek Pal Bhi Usy Aankh Se Ojhal Nahi Dekha – Ghazal by Agha Jarrar

The Beam Magazine presents a ghazal – ‘Ek Pal Bhi Usy Aankh Se Ojhal Nahi Dekha‘ by Agha Jarrar.

اک پل بھی اُسے آنکھ سے اُوجھل نہیں دیکھا
میں پھر بھی یہ کہتا ہوں مکمل نہیں دیکھا

میں نے تو گزرتے ہوئے دیکھا تھا اسے لیکن
وہ دل کا بہت سخت تھا اک پل نہیں دیکھا

کچھ دن سے ہوا حبس زدہ شہر کا موسم
کچھ دن سے فلک پر کوئی بادل نہیں دیکھا

یوں لگتا ہے صدیاں ہوئی اُس شخص کو دیکھے
حالانکہ جسے میں نے فقط کل نہیں دیکھا

جو تجھ سے گریزاں ہے اُسی شخص کی باتیں
جرارؔ کہیں تجھ سا کوئی پاگل نہیں دیکھا .

(آغاجرارؔ)

Ek pal bhi usy aankh se ojhal nahi dekha
Main phir bhi ye kehta hoon, mukammal nahi dekha,

Maine to guzarte hue dekha tha usy lekin
Woh dil ka bohot sakht tha ek pal nahi dekha,

Kuch din se hua hubs zada shehar ka mausam
Kuch din se falak par koi badal nahi dekha,

Yun lagta hai sadiyan hui us shakhs ko dekhe
Halanke jise maine faqat kal nahi dekha,

Jo tujh se gurezan hai usi shakhs ki baatain
JARRAR kahin tujh sa koi pagal nahi dekha.

(Agha Jarrar)

 

نوجوان نسل کے نمائندہ شاعر ”آغا جرار“ 5 اکتوبر 1994 کو ضلع سرگودھا کے اک دیہات سالم میں پیدا ہوئے. لاہور میں پچھلے دس سال سے مقیم ہیں. آپ نے بہاالدین ذکریا یونیورسٹی سے (ایل ایل بی) کیا.
آپ شاعر، اینکر، ناول نگار، افسانہ نگار اور ڈاریکٹر ہیں. اور آجکل عکاسی پروڈکشن ہاؤس سے ڈراموں اور افسانوں کو فلم کا رنگ دیتے ہیں.
آغا جرار کے دو شعری مجموعے ”تمہاری یادیں“ اور ”متاع سخن“ منظر عام پر آچکے ہیں.

For more Urdu ghazals and nazms available on The Beam Magazine, CLICK HERE.

Digiprove sealCopyright protected by Digiprove © 2019

Leave a Reply

avatar

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

  Subscribe  
Notify of