Phoolon Ka Janaza – Nazm by Okasha Momin

The Beam Magazine presents an emotionally touching Nazm – ‘Phoolon ka Janaza‘, by Okasha Momin.

16-12-2014

پشاور کے آرمی پبلک اسکول میں بچوں پر ہوئے حملے کے پس منظر میں لکھی گئی نظم

کیسے ہو؟” پوچھا جو روتی ماں نے اپنے بیٹے سے”
کوئی بھی پیغام نہ آیا ماں کو اپنے بیٹے سے
ماں کی گود میں، آنکھیں موندے چپ چپ سا وہ لیٹا تھا
ساری خوشیاں ساری خواہش ماں کی، اس کا بیٹا تھا
اپنے پیارے کومل ہاتھوں سے جو پودا سینچا تھا
بارہا اپنی گود میں لے کر پیار سے جس کو بھینچا تھا
جس بیٹے کو وہ اپنے جینے کی آشا کہتی تھی
جس کے ماتھے پر روزانہ پیار سے بوسہ دیتی تھی
آج اُسی بیٹے کو اپنے، خون میں لت پت دیکھا ہے
کفن پہن کے، گود میں ماں کی، لاش بنا جو لیٹا ہے
بھیجا تھا اسکول کہ وہ پڑھ لکھ کر کچھ بن جائے گا
کیا خبر تھی آج وہ بیٹا زندہ گھر نہ آئے گا
ہنستا کھیلتا ننھا سا، معصوم سا تھا وہ جینے میں
بخشا نہ اس کو حیوانوں نے، مار دی گولی سینے میں
اب تک سینکڑوں لوگوں کا ہم نے جنازہ دیکھا ہے
بوڑھا، جوان، مرد و عورت سب کا جنازہ دیکھا ہے
دیکھا جنازے پر ہے ہم نے، اب تک سب پر چڑھتے پھول
.لیکن پہلی بار اتنا پھولوں کا جنازہ دیکھا ہے

( عکاشہ مومن)

 

“Kaise ho?” Pucha jo roti maa ne apne bete se
Koi bhi paigaam na aaya maa ko apne bete se
Maa ki god me aañkheñ moonde chup chup sa wo leta tha
Saari khushyañ saari khwaahish maa ki, uska beta tha
Apne pyaare komal haathoñ se jo poda seeñcha tha
Baar-ha apni god me le kar pyar se jisko bheeñcha tha
Jis bete ko wo apne jeene ki aasha kehti thi
Jiske maathe par rozana pyaar se bosa deti thi
Aaj usi bete ko apne, khoon pe latpat dekha hai
Kafan pehan ke god me maa ki, laash bana jo leta hai
Bheja tha school ke wo padh likh kar kuch ban jayega
Kya khabar thi aj wo beta zinda ghar na aayega
Hansta khelta nanha sa, masoom sa tha wo jeene me
Bakhsha na usko haiwaanoñ ne, maar di goli seene me
Ab tak señkdoñ logoñ ka hum ne janaza dekha hai
Boorhha, jawaan, mard o aurat sab ka janaza dekha hai
Dekha janaze par hai hum ne ab tak sab par chadhte phool
Lekin pehli baar itna phoolon ka janaza dekha hai.

(Okasha Momin)

For more English and Urdu poetry available on The Beam Magazine, CLICK HERE.

Digiprove sealCopyright protected by Digiprove © 2019

2
Leave a Reply

avatar
2 Comment threads
0 Thread replies
0 Followers
 
Most reacted comment
Hottest comment thread
2 Comment authors
HiraRayeha Mariyum Recent comment authors

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

  Subscribe  
newest oldest most voted
Notify of
Rayeha Mariyum
Editor

ohhhhhhh very beautifully written…….nearly brought tears in eyes 🙁

Hira
Guest
Hira

سانہ پشاور کے شہدا کو سلام

😢