Qurbani by Matia Jahan

The Beam Magazine proudly presents ‘Qurbani‘ by Matia Jahan. A love story, and a masterfully crafted suspense thriller. Created by Matia Jahan, and brought to you by The Beam Magazine.

Matia belongs to Sargodha, and is a Graduate in Psychology. She started writing at the age of 13, and has been writing for the past 12 years. Writing is her passion. She loves writing on different genres. However, Science Fiction and Romance are her forte. Qurbani was the first novel written by her. She had completed writing this novel when she was only 15 years old.

Download Link 1

Download Link 2

Download Link 3 (Google Drive)

Or To continue reading online, click on the Next button below.

Qurbani by Matia Jahan Fimg

To read the novel ‘Fourth Eye’ by Matia Jahan, CLICK HERE.

For more Urdu novels available on The Beam Magazine, CLICK HERE.

To read English novels available on The Beam Magazine, CLICK HERE.

© 2018 The Beam Magazine (www.mybeammag.com)

Pages ( 1 of 132 ): 1 23456 ... 132Next »

11 thoughts on “Qurbani by Matia Jahan”

  1. قربانی، نام پڑھ کے سوچا وہی ٹیپیکل سٹوری نہ ہو لڑکی یا لڑکے نے محبت قربان کر دی وغیرہ 😬😬
    لیکن جب کہانی شروع کی تو مینہ کا کردار نہایت خوبصورت لگا، ایک خوش باش اور زندہ دل لڑکی جسے دیکھ کر زندگی سے پیار ہو جائے،
    (شروع میں ہی جو سسپنس ڈالا آپ نے v 24 والا اس نے قاری کو مزید متجسس کر دیا کہ بالآخر یہ ہے کیا بلا اور آپ کی 15 سال کی عمر میں اس پہ ریسرچ قابلِ داد ہے) مینہ کے کردار نے یقیناً ہر پڑھنے والے کو موٹیویٹ کیا ہو گا “کہ ہمیں اپنے اندر کے بچے کو کبھی نہیں مرنے دینا چاہئیے ورنہ زندگی میں صرف سنجیدگی رہ جاتی ہے” مینہ کی محبت، اس کا یقین سب بہت اچھا لگا، رجب کا کردار بھی بہت اچھا تھا اس کی محبت اور شک کے بیچ جنگ بڑی اچھی لگی اور تھوڑا غصہ بھی آیا 😊😊 لیکن محبت کو شک پر فتح ہوئی یہ پڑھ کر بہت خوشی ہوئی ، عالم لودھی کے کردار پر شروع سے ہی غلط ہونے کا شک تھا اس نے بھی ایک اچھا باپ بننے کے لئیے یہ سب کیا لیکن غلط کیا، ہم کسی کی جان لیتے ہوئے یہ کیوں بھول جاتے ہیں کہ اللہ سب سے بڑا قادر و مطلق ہے اور ہم نعوذبااللہ خود کو خدا سمجھنے لگ جاتے ہیں لیکن کہانی تو تب ختم ہوتی ہے جب ہم انجام سے دوچار ہوتے ہیں اس کا انجام اچھا لگا جو کہ ایسا ہی ہونا چاہیے تھا، کہانی کا دوسرا سب سے اہم کردار حامد جس نے اپنی نیکی صرف بدلے کی خاطر گنوا دی اس کردار سے سمجھ آیا ہے کہ نیکی اور بدی میں صرف ایک قدم کا فاصلہ ہوتا ہے اور یہ ایک قدم آپکی ساری نیکیوں کو خاک کر دیتا ہے، حامد نے ٹھیک کہا تھا کہ “اگر ہم اپنی سب سے پیاری چیز کی قربانی نہ دیں تو یہ دنیا اسے قربانی مانتی ہی نہیں ہے، اس نے اپنی سب سے پیاری چیز تو قربان کر دی لیکن عمر بھر کا پچھتاوا اپنا مقدر بنا لیا
    مینہ کے مرنے کا نہایت دکھ ہوا آنکھیں بھر آئی تھیں
    آپ نے 15 سال کی عمر میں یہ پلاٹ سوچا اس کے لئیے بہت ساری داد کہانی کسی بھی لحاظ سے ٹیپیکل نہیں لگی بہت اچھی اور متاثر کن، سبق آموز کہانی تھی
    کہانی نے شروع سے آخر تک بور نہیں ہونے دیا، مکالمے، مناظر، کردار ہر چیز بہت اچھی تھی خاص طور پر ڈائیلاگز جو بہت سے بھی زیادہ اچھے لگے
    “کچھ ملاقاتوں کے مقدر میں کہانیاں نہیں ہوتیں”
    “آپ کے لئیے جھوٹ بولا رجب تو پھر آپ سے بھی جھوٹ بولنے لگوں گی” اس جیسے اور بھی بہت سارے ڈائیلاگز جنہوں نے بہت متاثر کیا
    رہ گئیں املا کی غلطیاں جو کہیں کہیں نظر آئیں تو میں یہ کہنا چاہوں گی جس عمر میں آپ نے یہ ناول لکھا تب کسی کی بھی املا ٹھیک نہیں ہوتی…
    خوش رہیں
    اللہ آپکے قلم کو مزید طاقت دے آمین

    1. بہت شکریہ پیاری بہن آپ نے اتنا وقت نکال کی ناول پڑھا اور پھر اتنا خوبصورت تبصرہ دیا آپکی حوصلہ افزائی کے لیے بہت نوازش خُدا آپکو خوش رکھے آمین

  2. قربانی از مطیہ جہاں

    ناول کی سب سے خوبصورت بات تھی “تجسس۔” پورا ناول تجسس سے بھرپور تھا، اور اسی تجسس نے مجھے اپنے ساتھ باندھے رکھا، شروع سے لے کر آخر تک۔۔۔
    کردار نگاری بہت اچھی تھی، اور پلاٹ بہترین۔۔۔👍
    کچھ کچھ جملے بہت کلاسک تھے۔
    مینہ ایک ذہین اور زندہ دل لڑکی، انجانے میں ہی قربانی کی بھینٹ چڑھ گئی، جس کا افسوس مجھے ہمیشہ رہے گا۔
    رجب ایک پیار کرنے والا انسان، اس کی محبت بھی اس سے چھین لی گئی۔
    حامد نے ساری زندگی کی نیکی ایک انتقام کے بدلے گنوا ڈالی۔
    عالم لودھی اپنے انجام کو پہنچے۔
    اوور آل کہانی اور کردار متاثر کن تھے۔
    بیانیہ سادہ تھا۔ ناول کہیں کہیں (بہت کم) مجھے تھوڑا سا dragged لگا۔ جب بار بار جمال عالم صاحب کو اور پھر عالم رجب کو اور رجب مینہ سے بات کرتا۔۔۔
    لیکن بہرحال دلچسپی آخر تک برقرار رہی۔
    املا کی اغلاط تحریر کےحسن کو ماند کر دیتی ہیں، جو مجھے کافی جگہوں پر نظر آئیں۔ امید کرتی ہوں اگلی تحاریر میں یہ شکایت نہ ہو۔
    باقی مجھے ناول بے حد پسند آیا۔۔۔ اور مینہ اور رجب کی محبت تو کمال ❤️❤️❤️
    اللہ تعالیٰ آپ کے قلم کو اور بھی چاشنی بخشے۔۔ آمین۔۔ 😍

  3. Huhhh dear so so traumatic novel 😭 Starting was superb n ending was heart rending 😭 Just loved the character of Meena.😍 Such lively person.😍 A single thing for her,”SHE IS LOVE” . Rajab was good too but he should trust her 😭
    It’s truely said ‘betrayal and revenge destroy generations’ n here it is  
    Matia! you did a fabulous job 👌 Keep shining 💥
    God bless you 😊

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

error: Content is protected !!
%d bloggers like this: