Maa by Shameen Khan

The Beam Magazine presents a touching Urdu Nazm ‘Maa‘ by Shameen Khan.

پیاری ماں
جب تمہارے پاس تھے
ہر فکر اور غم سے آزاد تھے
تب ہم بچے
ہمارے خواب بھی کچے تھے
رنگوں کی دنیا میں کھوئے رہتے تھے
تتلیوں کے پیچھے بھاگتے تھے
ماں
ہمارا روٹھنا اور تمہارا منانا
ہمارا رونا اور تمہارا چپ کروانا 
ہمارا ہنسنا اور تمہارا ہنسانا
مجھے سب یاد ہے
ماں
ہم نادان تھے
نا سمجھ تھے
لیکن تم سے پیار کرتے تھے
او میری پیاری ماں
آج تم سے دور کیا ہوئے
سارے خواب ہی بکھر گئے
سارے رنگ پھیکے پڑ گئے
تتلیاں کہیں کھو گئی
اب ہم روٹھتے ہیں اور نہ ہی روتے ہیں
ہنستے تو ہیں 
لیکن
ہنسی کہیں کھو گئی ہے
پیاری ماں
تم سے دور رہ کر زندہ تو ہیں
لیکن
زندگی کہیں کھو گئی ہے۔

(شامین خان)

 

Pyari Maa

Jab tumhare paas the

Har fikr aur gham se aazad the

Tab hum bachche

Humare khwab bhi kachche the

Rangon ki duniya mein khoey rehte the

Titliyon ke peeche bhaagte the

Maa

Humara roothna aur tumhara manana

Humara rona aur tumhara chup karwana

Humara hansna aur tumhara hasaana

Mujhe sab yaad hai

Maa

Hum naadaan the

Na samajh the

Lekin tum se pyar karte the

O meri pyari maa

Aaj tum se door kya hue

Saare khwab hi bikhar gaye

Saare rang pheeke pad gaye

Titliyan kahin kho gayi

Ab hum roothte hain aur na hi rote hain

Hanste to hain

lekin

Hansi kahin kho gayi hai

Pyaari Maa

Tum se door rah kar zinda to hain

lekin

Zindagi kahin kho gayi hai.

 

(Shameen Khan)

 

For more Urdu and English poetry available on The Beam Magazine, CLICK HERE.

2 thoughts on “Maa by Shameen Khan”

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

error: Content is protected !!
%d bloggers like this: