Waqt ka Musafir – Nazm by Radaba Noureen

The Beam Magazine presents a Nazm ‘Waqt ka Musafir‘ by Radaba Noureen.

وقت کا مسافر

میں مسافر ہوں وقت کی۔۔

اور گزرے وقت میں بہت سی کہانیوں سے گزری ہوں۔۔۔۔

لیکن آج اس بےرحم وقت نے مجھ کو روک لیا ہے۔۔۔

ٹوک دیا ہے۔۔۔

کتنے ناتے چھوٹے ہیں۔۔۔

کتنے بندھن ٹوٹے ہیں۔۔۔

اب میں جب اگلے پل میں جاؤں گی۔۔

یہ ناتا بھی توڑ جاؤں گی۔۔

ناتا جو میرا تیرا ہے۔۔

بس یہی آخری ناتا ہے۔۔۔

سانسوں کے حلقے میں جو آتا ہے۔۔۔

…پھر تم وقت کی دھاروں میں بہتے آؤ گے

….ننگےپاؤں، آنکھیں موندے

مجھ سے کہو گے رک جاؤ نا۔۔۔

کچھ پل میرے ساتھ رہو نا۔۔۔

اور میں ہنس کر تم سے کہوں گی۔۔

میں مسافر وقت ہوں۔۔۔

میری قسمت چلنا ہے۔۔

ہر پل آگے بڑھنا ہے۔۔۔

 

(ردابہ نورین)

Waqt ka Musafir

Main musafir hoon waqt ki..

Aur guzarte waqt mein bahut si kahaniyon se guzri hoon…

Lekin aaj is beraham waqt ne mujh ko rok liya hai…

Tok diya hai…

Kitne nate choote hain…

Kitne bandhan toote hain…

Ab main jab agle pal mein jaungi…

Ye nata bhi tod jaungi…

Nata jo tera mera hai…

Bas yahi akhri nata hai…

Sanson ke halke mein jo aata hai…

Phir tum waqt ki dharon mein behte aaoge…

Nange paon, ankhein moonde…

Mujh se kahoge ruk jao…

Kuch pal mere sath raho na…

Aur main hans kar tum se kahoongi…

Main musafir waqt hoon…

Meri kismat chalna hai…

Har pal aage badhna hai…

 

(Radaba Noureen)

 

For more Urdu and English poetry available on The Beam Magazine, CLICK HERE.

Digiprove sealCopyright protected by Digiprove © 2019

Leave a Reply

avatar

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

  Subscribe  
Notify of