Lagane Jo Baitha Main Sood o Ziyan ka Hisaab – Ghazal by Nehan Masood

The Beam Magazine presents a ghazal – ‘Lagane Jo Baitha Main Sood o Ziyan ka Hisaab‘ by Nehan Masood.

لگانے جو بیٹھا میں سود وزیاں کا حساب

جسم وروح پر اترتے دیکھے میں نے عذاب

وحشت دل نے پھر مجھ سےکیا یہ سوال

کیا ملا ہر ایک رفاقت سے سوائے اضطراب

کبھی جن کی زندگی کا سب ہی کچھ ہم تھے

وہ بھی پوچھتے ہیں کہ آپ کون جناب؟

اب سوالی ہوں میں کہ کیسے بھول گئے ہمیں

کہ دعویٰ تھاتمہارا،کہ ہم ہیں تمہاری زندگی کا آخری باب

محبت ہمیں بھی ہے جاناں،مگر عزت پر مقدم نہیں

نوچ لیےمیں نے اپنی آنکھوں سے رفاقت کے سبھی خواب

یہ سوچ کر میں نے بھی خود کو مطمئن کر لیا ہے نہاں

اس کی قسمت میں نہیں تھا ہم سا گوہرِ نایاب

 ( نہاں مسعود)

Lagane jo baitha main sood o ziyan ka hisaab

Jism o rooh par utarte dekhe main ne azaab

Wehshat e dil ne phir mujh se kiya ye sawal

Kya mila har ek rafaqat se siway iztarab

Kabhi jin ke zindagi ka sab hi kuch hum the

Woh bhi poochte hain ke aap koun janab?

Ab sawali hoon main ke kaise bhool gaye humein

Ke dawa tha tumhara, ke hum hain tumhari zindagi ka aakhri baab.

Mohabbat humein bhi hai janan, magar izzar par muqdam nahin

Noch liye main ne apni aankhon se rafaqat ke sabhi khwab

Ye soch kar main ne bhi khud ko mutmain kar liya hai Nehan

Us ki qismat mein nahin tha hum sa gohar e nayab.

(Nehan Masood)

 

For more English and Urdu poetry available on The Beam Magazine, CLICK HERE.

 

2 thoughts on “Lagane Jo Baitha Main Sood o Ziyan ka Hisaab – Ghazal by Nehan Masood”

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

error: Content is protected !!
%d bloggers like this: