Shaitaan Masroof Hai Behkane Mein Tujhe – Ghazal by Javeria Butt

The Beam Magazine presents a new ghazal by Javeria Butt – ‘Shaitaan Masroof Hai Behkane Mein Tujhe‘.

شیطان مصروف ہے بہکانے میں تجھے
خدا مصروف ہے بنانے میں تجھے
تو پُرسرور ہے لذتِ غرور میں
غرور مصروف ہےگرانے میں تجھے

جہنم کی آگ بھی لگ گئی ہے کام میں
 ہو گی وہ مصروف جلانے میں تجھے

تجھے تو شوق پر گیا آرام کا بہت
بستر جو مصروف ہے سُلانے میں تجھے
موت کا خوف تجھ سے ختم ہو گیا
زندگی جو مصروف ہے کھیلانے میں تجھے

دنیا کے سارے کافر اکٹھے ہو کر
سب مصروف ہیں مٹانے میں تجھے
تمہیں میں سے کچھ لگے ہیں جدوجہد میں
وہ مصروف ہیں جگانے میں تجھے

خدا کی راہ چل کہ سیدھی ہے یہی راہ
راہیں بھی مصروف ہیں چلانے میں تجھے

(جویریہ بٹ)

Shaitaan masroof hai behkane mein tujhe

Khuda masroof hai banane mein tujhe

Tu pursuroor hai lazat e guroor mein

Guroor masroof hai girane mein tujhe

Jahannum ki aag bhi lag gayi hai kaam mein

Hogi woh masroof jalane mein tujhe

Tujhe to shouq par gaya aaram ka bahut

Bistar jo masroof hai sulane mein tujhe

Maut ka khauf tujh se khatm ho gaya

Zindagi jo masroof hai khelane mein tujhe

Duniya ke saare ikathe ho kar

Sab masroof hain mitane mein tujhe

Tumhein mein se kuch lage hain jad o jahad mein

Woh masroof hain jagane mein tujhe

Khuda ki raah chal ke seedhi hai yahi raah

Raahein bhi masroof hain chalane mein tujhe.

(Javeria Butt)

For more Urdu and English poetry available on The Beam Magazine, CLICK HERE.

8 thoughts on “Shaitaan Masroof Hai Behkane Mein Tujhe – Ghazal by Javeria Butt”

  1. MashaAllah. A good addition in poetic culture ❤️❤️❤️ may Allah bless you a lot. Ameen

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

error: Content is protected !!
%d bloggers like this: