Beja Husn Pe – Ghazal by Iram Shehzadi

The Beam Magazine presents a ghazal – ‘Beja Husn Pe‘ by Iram Shehzadi.

بے جا حُسن پہ جا مر مٹتے ہیں

یہ حُسن والے بھی کیا کرتے ہیں

اہلِ ذوق یہ لوگ ہوتے ہیں

ان کے بھی کیا نرالے شوق ہوتے ہیں

محبوب کی اداوّں پہ فدا ہوتے ہیں

یہ دل پھینک بھی بلا کے ہوتے ہیں

یہ اپنی بھی اداوں سے مار دیتے ہیں

زلف کو جس ادا سے سنوار دیتے ہیں

ان کے ملن سے روح کو تسکین ملتی ہے

جیسے سینے میں برف اُتار دیتے ہیں

!!!!میں تو اُن کا مُرید ہوگیا ہوں ۔۔۔۔دوستوں

جو خوابوں میں بھی ملے تو،روح تک نکھار دیتے ہیں

~یہ تو تمہاری ہماری نظروں کا هیر پھیر ہے،بہارے

ورنہ وہ تو دلوں میں رہتے ہیں

دلوں کو آباد کرتے ہیں

(اِرم شہزادی)

Beja husn pe ja mar mitte hain

Yeh husn wale bhi kya karte hain

Ahle zouq ye log hote hain

In ke bhi kya nirale shouq hote hain

Mehboob ki adaon pe fida hote hain

Ye dil phenk bhi bala ke hote hain

Ye apni bhi adaon se maar dete hain

Zulf ko jis ada se sanwar dete hain

In ke Milan se rooh ko taskeen milti hai

Jaise seene mein barf utaar dete hain

Main to un ka mureed ho gaya hoon….. doston!!!!

Jo khwabon mein bhi mile to, rooh tak nikhar dete hain

Ye to tumhari humari nazron ka her pher hai, Baharey

Warna woh to dilon mein rehte hain

Dilon ko aabad karte hain,

 

(Iram Shehzadi)

 

For more Urdu and English poetry available on The Beam Magazine, CLICK HERE.

 

2 thoughts on “Beja Husn Pe – Ghazal by Iram Shehzadi”

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

error: Content is protected !!
%d bloggers like this: